معروف چینی یونیورسٹیز میں پی ایچ ڈی کے لیے پبلی کیشن ریکوائرمنٹ ختم

معروف چینی یونیورسٹیز میں پی ایچ ڈی کے لیے پبلی کیشن ریکوائرمنٹ ختم

معروف چینی یونیورسٹیز میں پی ایچ ڈی کے لیے پبلی کیشن ریکوائرمنٹ ختم

چین کی متعدد یونیورسٹیز ڈگری حاصل کرنے کے لیے ڈاکٹریٹ کے طلباء کو مختلف جریدوں میں مقالات شائع کرنے کی لازمی ضرورت کو ختم کر رہی ہیں۔

چین کی مشہور پیکنگ یونیورسٹی، ٹی سنگھوا اور چائنیز اکیڈمی آف سائنسز سمیت ملک کے بہت سے مشہور اداروں نے پی ایچ ڈی کے لیے لیے پبلی کیشن ریکوائرمنٹ کو ختم کردیا ہے۔ جبکہ اس عمل نے دوسرے اداروں کو بھی اس پر عمل کرنے پر مجبور کردیا ہے۔

انسائیڈ ہائر ای ڈی کے مطابق، شنگھائی ژیائو ٹونگ یونیورسٹی کے ہیماٹولوجسٹ اور سالماتی ماہر حیاتیات چن سائجوان نے ایک تجویز پیش کی کہ تعلیمی اداروں کو پوسٹ گریجویٹ طلبہ کے لیے واحد "فیصلہ کن" گریجویشن کی ضرورت کے طور پر تعلیمی اشاعتوں کی فہرست بند کردینی چاہیے۔

چن نے میڈیا کو بتایا کہ شائع شدہ پیپرز کی ایک خاص تعداد کی توقع کرنا یا ڈاکٹریٹ کی شرط کے ساتھ کسی جریدے میں وابستگی کا مطالبہ کرنا، مشترکہ تحقیق کو نقصان پہنچاتا ہے اور جدید صلاحیتوں کی نشوونما میں رکاوٹ ہے۔

جبکہ دوسری تجویز میں جو نانژنگ نارمل یونیورسٹی میں پروفیسر اور سپروائزر کے سامنے پیش کی گئی، اس میں اس طرف اشارہ کیا گیا کہ یونیورسٹیوں کے اس مطالبے میں قانونی حیثیت کا فقدان ہے اور اس سے پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کرنے والے امیدواروں کے حق کی خلاف ورزی ہوسکتی ہے۔  

وسطی چین کی نارمل یونیورسٹی کے اسکول آف چائینیز لینگویج اینڈ لٹریچر کے پروفیسر زو جیانجن نے ٹائمز ہائیر ایجوکیشن کو بتایا کہ گذشتہ دو دہائیوں میں لازمی اشاعت کو اپنانا بنیادی طور پر ان فوائد کی وجہ سے ہے جو اس کے بجائے مضمون کی تشخیص اور یونیورسٹی کی درجہ بندی کے لیے پیش کرتا ہے۔

چین کی یونیورسٹیوں کے دوسرے پروفیسرز نے اس بات پر اتفاق کیا کہ پی ایچ ڈی کی ڈگری اور جامع تشخیص کے لیے قریبی مشاورتی جریدے کے ایڈیٹرز کے لیے پی ایچ ڈی کی ایک اہم ضرورت کو آؤٹ سورس کرنے سے بہتر انتخاب ہے۔

جنوبی چین میں واقع یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی کے انسٹی ٹیوٹ آف پبلک پالیسی میں معاون ژانگ رائومی نے کہا کہ ان طلبا کے لیے جنہوں نے طویل عرصے اور انتہائی دشواری کے ساتھ تحقیقی منصوبوں میں حصہ لیا، خاص طور پر بنیادی نظریاتی تحقیق میں ، ان طلبا کے تحقیقی شعبوں اور مضامین پر زیادہ لچکدار اور جامع تشخیص ہونی چاہیے۔ زائو نے مزید کہا کہ پوسٹ گریجویٹس کا اندازہ کرنے کے لیے اداروں کے اپنے سخت طریقہ کار ہیں، جہاں اسٹوڈنٹس کو تحقیقی تجاویز، پری ڈیفنس، گمنام ہم مرتبہ اسٹوڈنٹس کے جائزے اور آفیشل ڈیفنس سے گزرنا پڑتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ دیرینہ مسئلے کی جڑ وزارت تعلیم اور وزارت برائے انسانی وسائل اور سماجی تحفظ کی وزارت کی طرف سے نافذ کی جانے والی کچھ تشخیصی تقاضوں میں پنہاں ہے۔

انہوں نے بتایا کہ اعلیٰ درجہ بندی اور مضامین کی درجہ بندی کا مقابلہ تعلیمی اشاعت کی بھی ہدایت کرتا ہے جو اکثر اکیڈمک ریکوائرمنٹس میں لازمی ضرورت بن جاتی ہے۔

تمام مواد کے جملہ حقوق محفوظ ہیں ©️ 2021 کیمپس گرو

کیا آپ کے ذہن میں کوئی سوال ہے
ڈسکس کریں

× کلک کریں