کراچی یونیورسٹی : پی ایچ ڈی، ایم فل کے طلباء کو پرانی پالیسی کے تحت داخلہ دیا جائے گا

کراچی یونیورسٹی : پی ایچ ڈی، ایم فل کے طلباء کو پرانی پالیسی کے تحت داخلہ دیا جائے گا

کراچی یونیورسٹی : پی ایچ ڈی، ایم فل کے طلباء کو پرانی پالیسی کے تحت داخلہ دیا جائے گا

جامعہ کراچی کی تعلیمی کونسل نے ایم فل اور پی ایچ ڈی دونوں پروگراموں میں طلباء کو 2019 کی پرانی پالیسی کے تحت داخلہ دینے کا فیصلہ کیا ہے، جس میں ایم فل پروگراموں میں داخلے کا احاطہ نہ کرنے والی ہائر ایجوکیشن کمیشن کی نئی پالیسی کو نظر انداز کیا گیا ہے۔

پیر کے روز کے یو کے وائس چانسلر ڈاکٹر خالد محمود عراقی کی زیرصدارت تعلیمی کونسل کے اجلاس میں اس فیصلے کو حتمی شکل دی گئی۔

مزید پڑھیں: آئی آئی یو آئی میں ٹیک سیوی انسانی وسائل تیار کرنے کا مرکز بنایا جائے گا

اس کے علاوہ اجلاس میں اس سلسلے میں قانونی مشورہ حاصل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے کہ آیا سندھ کالج ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ کے ذریعہ ایک اشتہار کی روشنی میں دو سالہ انڈرگریجویٹ اور ماسٹرز پروگرام جاری رکھنا ہے یا بند کرنا ہے، جس میں اعلان کیا گیا تھا کہ وہ اس معاملے میں خود کو شامل نہیں کرے گا۔

اس معاملے پر اپنی سفارشات پیش کرنے کے لیے ڈاکٹر جمیل کاظمی کی سربراہی میں ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔ تاہم دو سالہ انڈرگریجویٹ اور ماسٹر پروگرام میں داخلہ غیر معینہ مدت کے لیے معطل کردیا گیا ہے۔

اجلاس کے بعد کے یو کے وی سی ڈاکٹر خالد عراقی نے ایکسپریس ٹریبون سے گفتگو کرتے ہوئے مزید کہا کہ پی ایچ ڈی کے لیے بنائی گئی ایچ ای سی کی نئی پالیسی میں کئی ابہام پائے گئے ہیں۔ مثال کے طور پر، (اس کی کوئی وضاحت نہیں کی گئی ہے) کہ پی ایچ ڈی پروگرام میں داخلہ لینے والا طالب علم ایم فل ڈگری کے ساتھ کیسے پاس ہوسکتا ہے۔ ایک اور مثال دیتے ہوئے وائس چانسلر نے مزید کہا کہ پرانی پالیسی کے تحت، ایچ ای سی کی اسکالرشپ پر پی ایچ ڈی کرنے والے طالب علموں کو ایچ ای سی سے منظور شدہ سپروائزر کی نگرانی میں ڈگری مکمل کرنے کی ضرورت تھی، مگر اب ہر طالب علم کو ایچ ای سی سے منظور شدہ سپروائزر کی نگرانی میں پی ایچ ڈی کی ڈگری مکمل کرنے کی ضرورت ہے۔

ڈاکٹر خالد عراقی کے مطابق، ایچ ای سی کو ایک رپورٹ ارسال کی جائے گی اور اس دوران آنے والے اسٹوڈنٹس کو 2019 کی پالیسی کے تحت داخلے دیئے جائیں گے۔

مزید پڑھیں: پاکستان میں 25 لاکھ بے گھر بچے حکومت کی توجہ اور امداد کے منتظر

اس کے علاوہ تعلیمی کونسل کے ایک رکن ڈاکٹر حارث شعیب نے اجلاس میں نشاندہی کی کہ نئی پالیسی کے مطابق بیرون ملک کسی مستند فرد کے ذریعے پی ایچ ڈی مقالے کی جانچ کرنے کے بجائے پاکستان میں مقیم ممتاز قومی پروفیسرز یا ٹینیور ٹریک پروفیسرز کو ان مقالات کو جانچنے کی پابندی عائد کی گئی ہے،مگر انہوں نے کہا کہ ایچ ای سی نے اس بات کی وضاحت نہیں کی ہے کہ ممتاز قومی پروفیسر سے اس کی کیا مراد ہے۔ ڈاکٹر حارث شعیب کے مطابق تشخیص کے لیے بیرون ملک مقالہ نہ بھیجنا تحقیق کے معیار میں کمی کا باعث بنے گا۔

انہوں نے ایکسپریس ٹریبون سے بات چیت کرتے ہوئے اشارہ کیا کہ ایچ ای سی نے طلبہ کے لیے 48 کریڈٹ گھنٹے پر مشتمل کورس ورک مکمل کرنا لازمی قرار دیا ہے جس کے ساتھ مقالے کے لیے تحقیق مکمل کرنا ناممکن ہے۔

تمام مواد کے جملہ حقوق محفوظ ہیں ©️ 2021 کیمپس گرو

کیا آپ کے ذہن میں کوئی سوال ہے
ڈسکس کریں

× کلک کریں