کوہستان میں معطل خاتون ٹیچر کے اکائونٹ سے دس لاکھ روپے سے زائد کی رقم ضبط

کوہستان میں معطل خاتون ٹیچر کے اکائونٹ سے دس لاکھ روپے سے زائد کی رقم ضبط

کوہستان میں معطل خاتون ٹیچر کے اکائونٹ سے دس لاکھ روپے سے زائد کی رقم ضبط

ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس اور ایجوکیشن آفیسرز نے مبینہ طور پر ڈیوٹی سے غیر حاضر رہنے کے الزام میں معطل کی گئی ایک خاتون ٹیچر کے اکاؤنٹ سے دس لاکھ روپے سے زائد کی رقم ضبط کی ہے۔

ضلعی کوہستان میں اسسٹنٹ ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر کے ذریعے خیبر پختون خوا ایلیمنٹری اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ کو بھیجے گئے ایک سرکاری خط کے مطابق، معطل کی گئی خاتون ٹیچر کے اکائونٹ سے تقریباً دس لاکھ روپے سے زائد کی رقم غیر قانونی طور پر واپس لی گئی تھی۔

مزید پڑھیں: طلبا کا وزیرتعلیم شفقت محمود سے اسکول بند رکھنے پر اصرار

گورنمنٹ گرلز اسکول بار اسوئی کوہستان میں تعینات پرائمری اسکول کی ٹیچر فاطمہ بی بی کو اپنی ڈیوٹی سے طویل غیر حاضری کی بنا پر معطل کیا گیا تھا تاہم انہیں کچھ ماہ قبل ہی ڈائریکٹوریٹ نے بحال کردیا تھا۔

فاطمہ بی بی کے لیے مقررہ وقت کے اندر ڈیوٹی پر حاضر ہونا ضروری تھا لیکن وہ ایسا کرنے میں ناکام رہیں، جس کے نتیجے میں انہیں قواعد کے تحت معطل رکھا گیا۔ تاہم، متعلقہ ڈسٹرکٹ اکاؤنٹس آفیسر کے ذریعہ ان کے دفتر نے اپریل 2020 میں فاطمہ بی بی کی تنخواہوں کے نام پر غیر قانونی طور پر ایک اعشاریہ چونسٹھ ملین روپے بنائے تھے۔

خط میں کہا گیا ہے کہ کوئی استاد اپنی ڈیوٹی سرانجام دیئے بغیر اتنی بڑی رقم کا دعویٰ کیسے کرسکتا ہے۔ انہوں نے نشاندہی کی کہ اور بھی چار غیر حاضر اساتذہ ہیں جن کی تنخواہیں ابھی بھی ان کے کھاتوں میں جمع کی جارہی ہیں۔

مزید پڑھیں: کے پی کی یونیورسٹیز میں نئے بھرتی شدہ اسٹاف کی پینشن منسوخ کرنے کا فیصلہ

اے ایس ڈی ای او کا کہنا تھا کہ اس معاملے کی تحقیقات کے لیے انہوں نے ایک خط لکھا لیکن اس کا ابھی تک کوئی جواب نہیں ملا۔

اس سلسلے میں موجودہ ڈی ای او ڈاکٹر ریحانہ یاسمین نے بتایا کہ جب انہوں نے یہ چارج سنبھالا تھا تو معاملہ اس وقت موجود تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ وہ اس معاملے کی تحقیقات کا خیرمقدم کریں گی۔

تمام مواد کے جملہ حقوق محفوظ ہیں ©️ 2021 کیمپس گرو

کیا آپ کے ذہن میں کوئی سوال ہے
ڈسکس کریں

× کلک کریں