جامعہ کراچی کے ٹیچر میٹیور شاور کی واضح تصاویر لینے میں کامیاب

جامعہ کراچی کے ٹیچر میٹیور شاور کی واضح تصاویر لینے میں کامیاب

جامعہ کراچی کے ٹیچر میٹیور شاور کی واضح تصاویر لینے میں کامیاب

انسٹی ٹیوٹ آف اسپیس سائنس اینڈ ٹیکنالوجی، جامعہ کراچی کے فیکلٹی ممبر انجینئر ابصار احمد خان  اپنے کیمرہ میں میٹیور شاور کی واضح اور شاندار تصاویر لینے میں کامیاب ہوگئے۔

یہ پہلی بار ہے کہ میٹیور شاور کی تصاویر کو کے یو کے ایک خصوصی کیمرہ کے ذریعے قید کیا گیا ہے۔ میٹیور شاور یعنی شہاب باری کی ایک تصویر 13 دسمبر کی صبح 4.30 بجے اور دوسری تصویر 14 دسمبر کو صبح 1.45 بجے لی گئی۔

یونیورسٹی کے جاری کردہ بیان کے مطابق انجینئر ابصار احمد خان نے خاصا وقت لگا کر میٹیور شاور کا حیرت انگیز اور خوبصورت آسمانی واقعہ ریکارڈ کیا، جس میں رات کے وقت آسمان کے ایک نقطہ سے متعدد ستاروں کے گردش کرنے یا پیدا ہونے کا مشاہدہ کیا جاتا ہے۔

مزید پڑھیں: کے یو نے 2021 کے لیے مخصوص نشستوں کا شیڈول جاری کردیا

انجینئر ابصار خان نے کہا کہ پاکستان شمالی نصف کرہ میں واقع ہے اور اتوار کی رات کو پورٹینٹس کا ایک مناسب نظارہ نظر آیا جسے انہوں نے اپنے کیمرے میں قید کیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ میٹیور شاور عام طور پر شوٹنگ اسٹارز کے نام سے جانا جاتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ جیمنیڈ میٹیور شاور جو موسم گرما کے شاور کے نام سے مشہور ہے، 13 دسمبر کی رات کو آسمان پر نظر آیا اور توقع تھی کہ یہ شاندار نظارہ 14 دسمبر کی رات کو بھی جاری رہے گا۔

انہوں نے کہا کہ اس سال جیمنیڈ شاور کی شرح اس لیے بھی بہتر تھی کیونکہ تقریباً نئے چاند کے باعث آسمان پر زیادہ روشنی نہیں تھی، لہٰذا گہری تاریکی میں آسمان پر دکھائی دینے والی شہاب باری ایک منفرد نظارہ پیش کررہی تھی۔

تاہم، انہوں نے نشاندہی کی کہ چونکہ کراچی روشنیوں سے بہت زیادہ آلودہ ہے، لہٰذا ان میٹیور شاورز کو کیمرے میں قید کرنا مشکل ہوجاتا ہے، لیکن رات کی تاریکی میں وسیع آسمان پر نظریں جمائے رکھنے سے 13 اور 14 دسمبر کی رات کو وہ اس خوبصورت نظارے کو براہ راست اپنی آنکھوں سے دیکھنے کے قابل ہوئے اور انہوں نے فوراً اسے کیمرے میں قید کرلیا۔۔

انجینئر ابصار خان نے بتایا کہ کے یو کے آئی ایس ایس ٹی کے ذریعہ کم از کم ایک واضح طور پر دکھائی دینے والے میٹیور شاور کو کیمرے میں قید کرنے کی مختلف کوششیں کی جاچکی ہیں۔

مزید پڑھیں: ایم ڈی کیٹ 2020: طلباء کا ٹوئٹر پر پی ایم سی کے خلاف احتجاج اور حکومت سے انصاف کا مطالبہ

یہ شہاب باری بارش زمین کے ماحول میں 22 میل فی سیکنڈ میں ڈوب جاتی ہے اور جب وہ لہروں میں بخارات بن جاتی ہے تو ہم انہیں شوٹنگ اسٹارز کہتے ہیں۔

ماہر فلکیات فرانسز ریڈی کے مطابق میٹیور شاور ایک چمکتی ہوئی پگڈنڈی کی طرح ہے، وہ کہتے ہیں کہ بہت سارے میٹیورز جلدی چمکتے ہیں، لیکن کچھ میٹیورز عرصہ دراز سے آسمان کی وسعتوں میں موجود ہوتے ہیں اور ہمارے لیے ان کا راستہ تلاش کرنا اتنا آسان نہیں ہوتا۔

تمام مواد کے جملہ حقوق محفوظ ہیں ©️ 2021 کیمپس گرو

کیا آپ کے ذہن میں کوئی سوال ہے
ڈسکس کریں

× کلک کریں