ورچوئل اسپیسز میں تھیٹر کی تعلیم

ورچوئل اسپیسز میں تھیٹر کی تعلیم

ورچوئل اسپیسز میں تھیٹر کی تعلیم

تعلیمی ماہرین کے مطابق درس و تدریس کا ایک بہت موثر ذریعہ تھیٹر ہے جو سماجیات، اظہاریات اور دانشورانہ ترقی کو آپس میں ضم کرتا ہے اور تعلیمی اہداف تک بھی پہنچ جاتا ہے۔

مثال کے طور پر آپ اپنے طلباء کو چارلس ڈکنز کی کلاسیکی گریٹ ایکسیپٹیشنز سکھارہے ہیں۔

ناول کے ذریعے یا صرف اسکرپٹ کو اپنا کر کسی ادبی شاہکار کو پرفارم کرنے سے طلبا کو آن لائن اسپیس میں اپنے آپ کو حقیقی طور پر ظاہر کرنے کا اہل بنایا جاسکتا ہے۔

چنیدہ ابواب کو پڑھنے سے طلبا کو ناول کے بنیادی حصوں کو سمجھنے کا موقع ملے گا۔

پڑھنے اور سوال جواب کے دوران آپ کے اسٹوڈنٹس وسیع تر موضوعات، ذہن سازی کے نظریات اور مسئلے کو حل کرنے والے چیلنجز کے لیے اہم نقطہ نظر کے بارے میں مختصر گفتگو میں مشغول ہوسکتے ہیں۔

مثال کے طور پر آپ طلباء سے اسٹیج پر مخصوص جملے، مناظر اور افعال لانے کے لیے مواقع اور آئیڈیاز ڈیزائن کرنے کے لیے کہہ سکتے ہیں۔

لڑائی کیسی تھی؟ پِپ نے روٹی کیسے چرائی، قبرستان کا منظر یا پِپ فرار کیسے ہوا۔

طلباء سے یہ سوچنے کے لیے پوچھیں کہ ان مناظر کو ورچوئل اسپیس کے مرحلے میں کیسے لایا جاسکتا ہے۔

اب ایک استاد طلباء سے ناول میں وہ تین کردار لکھنے کو کہہ سکتا ہے جو وہ ادا کرنا چاہتے ہیں اور ایک ایسا کردار جسے وہ ادا نہ کرنا چاہیں۔

 جوابات پیش کرنے کے بعد اس امر پر گفتگو کریں کہ وہ ایک خاص کردار اور اس کے استدلال کو کیوں ادا کرنا چاہتے ہیں۔

طلبا سے بات چیت کا یہ فائدہ ہوتا ہے کہ وہ مضبوط معلومات اور آئیڈیاز دیتے ہیں۔

آپ یہ بھی دیکھ پائیں گے کہ کون بہت ساری لائنوں کے ساتھ ایک کردار ادا کرنا چاہتا ہے اور کون شرمیلا اور چُپ چاپ ہے مگر پھر بھی ایک شیطان غنڈے کا ہولناک ادا کرنا چاہتا ہے۔

کرداروں کو منتخب کرنے اور پسند کرنے کی اجازت دینے سے استاد اپنے طلباء کو اکیڈمک سیٹنگز کو سمجھنے کے لیے جذبات اور دیگر بصیرت کو بھی سامنے لا سکے گا۔

ورچوئل اسپیس میں تھیٹر کی مشق کرنے کے لیے نکات

مختصر اداکاری والے وارم اپس، چہرے کے تاثرات، شخصیت کے اظہار اور باڈی لینگویج کے استعمال کے ساتھ بلند آواز سے مکالمے پڑھنا، طلبا کو پوری طوالت سے استفادہ کرنے کی اجازت دینا اور جسم کو اس بات کا ترجمہ کرنے کی اجازت دینا جو اظہار کیا گیا ہے، یہ وہی کام ہے جو ایک استاد اپنے طلبا کو ورچوئل کلاس رومز کے دوران کرنے کا اہل بناتا ہے۔

ریہرسلز کے لیے جگہ فراہم کرنا مشکل ہے تاہم یہاں آپ کے پاس آئوٹ ڈور، اصل خالی جگہوں کے استعمال اور مطلوبہ پراپس کو عمدگی سے استعمال کرنے کا پورا امکان موجود ہے۔

مثال کے طور پر آپ کو کسی کچن کے سین کے لیے اصل باورچی خانے میں ریہرسل کرنی ہے تو اس کے لیے آپ کے کسی طالب علم کے گھر کے کچن میں باورچی خانے کے منظر کی ریہرسل کرسکتے ہیں۔

اپنے خیالات کو گہرا کریں اور حقیقی زندگی سے منسلک ہوں

طلباء کی ریہرسل مکمل کرنے کے بعد اب وقت آگیا ہے کہ انسائیڈ اسٹوری پر تبادلہ خیال کیا جاسکے۔

ایک استاد طلبا سے سوال کرسکتا ہے کہ کہانی کا ایک خاص کردار ان کی زندگی سے کس طرح کا تعلق رکھتا ہے؟

کہانی کے اسکرپٹ میں تبدیلی کے کیا امکانات ہیں؟

اگر وہ مصنف ہوتے تو وہ اسکرپٹ کو کیسے لکھتے؟

اگر کہانی اسٹیج پر پیش کی جائے تو اس کے بیک گرائونڈ میں کس قسم کی موسیقی استعمال کی جاسکتی ہے؟

ملبوسات کیسے اور کس نوعیت کے ہوں گے؟

ان سے منظر اور اجزا کی تفصیلات لکھنے کے لیے کہیں۔ ایک گھڑی، درخت، مکان، برتن وغیرہ  یہ سب عملی طور پر کس طرح نظر آئے گا؟

اب ایک ٹیچر اپنی کلاس کو مختلف ٹیموں میں تقسیم کرسکتا ہے اور ہر منظر کے مجازی پس منظر کے لیے ان کو مخصوص کردار تفویض کرسکتا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ ڈیزائن، ایکٹنگ، ملبوسات اور تخلیقییت کے بارے میں بھی امور تفویض کیے جاسکتے ہیں۔

ٹیموں کو منصوبے پر تبادلہ خیال کرنے کے لیے مختلف بریک آؤٹ رومز میں بھیجا جاسکتا ہے۔

اس سے طلبا کو ڈیزائن، منصوبہ سازی، کام کرنے اور اس کے بارے میں جاننے میں مدد ملے گی کہ وہ ورچوئل اسپیسز میں فنون کو انجام دینے کے حوالے سے کیسے کام کرسکتے ہیں۔

کیا غلط ہوسکتا ہے؟

اگرچہ تھیٹر کی عملی طور پر منصوبہ بندی اور اس پر عمل کرنا کوئی آسان کام نہیں ہے لیکن اساتذہ کو یہ یقینی بنانا ہوگا کہ وہ طلبا کو یہ یقین دہانی کرائیں کہ وہ ان چیزوں کو ذہن میں رکھیں جو غلط ہوسکتی ہیں۔

ایک طالب علم انٹرنیٹ کنکشن کھو سکتا ہے یا اپنے مکالموں میں سے کوئی لائن بھول سکتا ہے۔

ان غلطیوں کو دھیان میں رکھنا انتہائی ضروری ہے، یہی وجہ ہے کہ رواں یا لائیو تھیٹر پرفارمنس آرٹس کے شعبہ جات میں شامل ایک اہم شعبہ ہے۔

ہم آپ کے اگلے تھیٹر لیسن کے لیے نیک تمنائوں کے خواہاں ہیں۔

تمام مواد کے جملہ حقوق محفوظ ہیں ©️ 2021 کیمپس گرو

کیا آپ کے ذہن میں کوئی سوال ہے
ڈسکس کریں

× کلک کریں