ایم بی بی ایس اور بی ڈی ایس کے علاوہ دیگر طبی شعبہ جات

ایم بی بی ایس اور بی ڈی ایس کے علاوہ دیگر طبی شعبہ جات

ایم بی بی ایس اور بی ڈی ایس کے علاوہ دیگر طبی شعبہ جات

پاکستان میں سرکاری اور نجی دونوں طرح کی یونیورسٹیز میں ہر سال ہزاروں طلبہ و طالبات میڈیکل ٹیسٹ کے امتحان کے لیے بیٹھتے ہیں تاہم ، اس اہم شعبے میں داخلے حاصل کرنے والوں کی شرح خاصی کم ہے۔ یہاں ہمیشہ بڑی تعداد میں طلباء  ہوتے ہیں جو اہلیت کو پرکھنے کے ٹیسٹ کو پاس نہیں کر سکتے اور اسی وجہ سے مایوس ہوجاتے ہیں جس کے نتیجے میں وہ اپنی دلچسپی اور کیریئر کا راستہ کھو دیتے ہیں۔ اس بلاگ میں ہم آپ کو طب کے میدان میں سرگرم متعدد شعبوں کے بارے میں بتائیں گے جنہیں آپ اپنا مقام و مرتبہ بنانے کے لیے منتخب کرسکتے ہیں اگر آپ نے اسے MBBS یا BDS پروگرامز میں شامل نہیں کیا ہے۔

میڈیکل اسٹوڈنٹس کے لیے آپشنز:

انٹرمیڈیٹ میں پچاسی فیصد سے زیادہ نمبر حاصل کرنے والے طلبا کے لیے اگے بڑھنے اور اپنا کیریئر بنانے کے لیے 3 فیلڈ آپشنز موجود ہیں، جو کہ درج ذیل ہیں۔

فارمیسی:

ایم بی بی ایس اور بی ڈی ایس کے علاوہ دیگر طبی شعبہ جات

فارمیسی مائل باعروج اور قابل قدر صحت کے پیشوں میں سے ایک ہے جو ہیلتھ سائنسز کو کیمیکل سائنسز سے جوڑتی ہے۔ فارمیسی کا پیشہ اس خطے میں جہاں پیشہ ور افراد کام کرتے ہیں وہاں دوائوں کے محفوظ اور موثر استعمال کو یقینی بنانے میں معاون ہے۔ اس کا دائرہ وسیع اور متحرک ہے۔ اس میں کمپاؤنڈنگ اور ڈسپینسگ میڈی کیشنز شامل ہیں۔ طب کے شعبے میں جدید خدمات جیسے مریضوں کی دیکھ بھال، طبی خدمات، حفاظت اور افادیت کے لیے دوائوں پر تحقیق کرنا اور منشیات سے متعلق معلومات فراہم کرنا فارمیسی کے میدان میں پریکٹس کے کچھ شعبے ہیں۔

فارمیسی کے شعبے میں کیریئر اور اسکوپ:

کنسلٹنٹ فارماسسٹ۔

کلینیکل فارماسسٹ۔

ڈسپینسری مینیجر۔

ڈسپینسری فارماسسٹ۔

کمیونٹی فارماسسٹ۔

ہاسپٹل فارماسسٹ۔

میڈیسنز سیفٹی مینیجر۔

میڈیسنز مینیجمنٹ ٹیکنیشن۔

فارمیسی اسسٹنٹ۔

سینئر کلینیکل فارماسسٹ۔

بی ایس فارمیسی پیش کرنے والے ادارے:

ذیل میں کچھ اہم اداروں کے نام ہیں جو پاکستان میں فارمیسی کے شعبے میں ڈگری پیش کرتے ہیں۔

یونیورسٹی آف کراچی۔

یونیورسٹی آف پنجاب۔

ڈائو یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز۔

قائدِ اعظم یونیورسٹی۔

اسلامیہ یونیورسٹی آف بہاولپور۔

یونیورسٹی آف ایگریکلچر۔

لیاقت یونیورسٹی آف میڈیکل اینڈ ہییلتھ سائنسز۔

جناح سندھ میڈیکل یونیورسٹی۔

یونیورسٹی آف ویٹرینری اینڈ اینیمل سائنس۔

بائیوٹیکنالوجی:

ایم بی بی ایس اور بی ڈی ایس کے علاوہ دیگر طبی شعبہ جات

بائیوٹیکنالوجی کا میدان خاصا وسیع ہے جہاں آپ کے لیے اپنا کیریئر بنانے کی لامحدود گنجائش موجود ہے، یہ حیاتیات، سالماتی حیاتیات، جینیاتیات اور حیاتیات کے دیگر تمام ذیلی شعبوں پر لاگو ہونے والی ٹیکنالوجی ہے۔

بائیو ٹیکنالوجسٹ اپنے آس پاس کی ماحولیاتی صحت اور فطرت کو بہتر بنانے کے لیے ٹیکنالوجی کا استعمال کرکے اپنی مہارت کو بروئے کار لاتے ہیں۔

اس میں صنعتی تیاری کے عمل میں کلینر، کم اور محفوظ توانائی کا بھی استعمال شامل ہے۔

بائیوٹیکنالوجی کے شعبے میں کیریئر اور اسکوپ:

بائیوٹیکنالوجی کے میدان میں ڈگری حاصل کرنے کے بعد آپ درج ذیل شعبوں  میں اپنی صلاحیتوں کو بروئے کار لاسکتے ہیں۔

ریسرچ اینڈ ڈیولپمنٹ۔

کوالٹی اشورنس، ریگولیٹری افیئرز۔

مینوفیکچرنگ۔

کلینیکل ریسرچ۔

گورنمنٹ (پالیسی میکنگ)

سافٹ ویئر انجینئرنگ۔

فوڈ، اینیمل اینڈ انوائرنمنٹل سائنس۔

سیلز اینڈ ٹیکنیکل سپورٹ۔

بزنس مینیجمنٹ۔

پراجیکٹ مینیجمنٹ۔

بائیوٹیکنالوجی میں بی ایس کی ڈگری پیش کرنے والے ادارے:

وہ ادارے جو پاکستان میں بائیوٹیکنالوجی کے شعبے میں بی ایس کی ڈگری پیش کرتے ہیں وہ یہ ہیں۔

یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی، بنوں۔

گورنمنٹ کالج یونیورسٹی، فیصل آباد۔

یونیورسٹی آف گجرات، گجرات۔

قائدِ اعظم یونیورسٹی، اسلام اباد۔

ڈائو یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز، کراچی۔

یونیورسٹی آف کراچی، کراچی۔

یونیورسٹی آف مینیجمنٹ سائنسز اینڈ انفارمیشن ٹیکنالوجی، کوٹلی۔

کنیئرڈ کالج فار ویمن، لاہور۔

یونیورسٹی آف ویٹرینری اینڈ اینیمل سائنسز، لاہور۔

10۔ ورچوئل یونیورسٹی آف پاکستان۔

بائیوکیمسٹری:

ایم بی بی ایس اور بی ڈی ایس کے علاوہ دیگر طبی شعبہ جات

بائیو کیمسٹری کا شعبہ بھی اپنے آپ میں ایک وسیع شعبہ ہے اس شعبے کے پیشہ ور افراد کو بائیو کیمسٹ کہا جاتا ہے۔ اس ڈگری میں آپ جینیات اور سالماتی بنیادوں پر انزائم، پروٹین، کاربو ہائیڈریٹ، چربی اور دیگر مطالعات کے افعال کے بارے میں مطالعہ کرتے ہیں۔ بائیو کیمسٹ زیادہ تر تحقیق سے متعلق کام میں سرگرم ہوتے ہیں۔ بائیو کیمسٹ طبیعیات دان، کیمسٹ اور صحت کی دیکھ بھال کے پیشہ ور افراد کے ساتھ ساتھ انجینئرز کے ساتھ مل کر کام کرتے ہیں۔

بائیو کیمسٹری میں کیریئر اور اسکوپ:

بائیو کیمسٹ کے لیے ملازمت کے امکانات بہت زیادہ ہیں۔ بائیو کیمسٹ کے لیے ملازمت کی صنعت میں درج ذیل شعبہ جات شامل ہیں:

فارماسیئوٹیکلز۔

انڈسٹریل لیبس۔

بلڈ بینکس۔

پبلک ہیلتھ سروسز۔

اسپتال۔

ایجوکیشنل انسٹیٹیوٹس۔

ریسرچ انسٹیٹیوٹس۔

فارنسک سائنس۔

کاسمیٹک انڈسٹری۔

بائیو کیمسٹری کے شعبے میں میں بی ایس کی پیش کش کرنے والے ادارے:

وہ ادارے جو پاکستان میں بائیو کیمسٹری کے شعبے میں ڈگری پیش کرتے ہیں ان میں درج ذیل ادارے شامل ہیں۔

گورنمنٹ کالج یونیورسٹی، فیصل آباد۔

یونیورسٹی آف ایگریکلچر، فیصل آباد۔

قائدِ اعظم یونیورسٹی، اسلام آباد۔

یونیورسٹی آف کراچی، کراچی۔

کنیئرڈ کالج فار ویمن، لاہور۔

یونویرسٹی آف پنجاب، لاہور۔

یونیورسٹی آف ویٹرینری اینڈ اینیمل سائنسز، لاہور۔

ہزارہ یونیورسٹی، مانسہرہ۔

یونیورسٹی آف بلوچستان، کوئٹہ۔

10۔ سردار بہادر خان ویمن یونیورسٹی، کوئٹہ۔

دیگر شعبہ جات:

ایسے طلبا جنہوں نے انٹرمیڈیٹ میں اسی فیصد سے بھی کم نمبر حاصل کیے ہیں ان طلباء کے لیے بہت سے دوسرے شعبوں کے اختیارات موجود ہیں جو ایم بی بی ایس پروگرام میں نہیں آسکتے۔

ان طلبا کے لیے درج ذیل شعبہ جات دستیاب ہیں۔

فزیوتھیراپی۔

ویٹرینری، اینیمل سائنسز۔

بائیومیڈیکل انجینئرنگ۔

ڈائیٹ اینڈ نیوٹریشنسٹ۔

آپٹومیٹری۔

کارڈیئک پرفیوژن۔

تمام مواد کے جملہ حقوق محفوظ ہیں ©️ 2021 کیمپس گرو

کیا آپ کے ذہن میں کوئی سوال ہے
ڈسکس کریں

× کلک کریں