کس طرح آپ کورونا وائرس کے دوران گھر پر بیٹھ کے تعلیم حاصل کرسکتے ہیں

کس طرح آپ کورونا وائرس کے دوران گھر پر بیٹھ کے تعلیم حاصل کرسکتے ہیں

کس طرح آپ کورونا وائرس کے دوران گھر پر بیٹھ کے تعلیم حاصل کرسکتے ہیں

اگرچہ کورونا وائرس کے پھیلائو نے ہم میں سے بیشتر افراد کو اپنے اپنے گھروں پر ہی رہنے پر مجبور کردیا ہے، لیکن وائرس پھیلنے کی وجہ سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے شعبوں میں تعلیم ہے، جو یکدم رک گئی ہے۔ عالمی محققین اور تعلیم کے شعبے سے وابستہ افراد طلباء اور اساتذہ کے لیے بالترتیب دور دراز کے مطالعے اور تعلیمات کو معمول پر لانے کے لیے پلان بی ڈھونڈ رہے ہیں اور اس حوالے سے حکمت عملی وضع کررہے ہیں۔

اگرچہ زیادہ تر یونیورسٹیاں اور کالج ایسے وقتوں میں آن لائن تعلیم کے نظام کو اپنا چکے ہیں جبکہ آدھی دنیا قرنطینہ میں چلی گئی ہے اور لوگ اپنے گھروں میں قید ہیں، آن لائن درس و تدریس میں ایڈجسٹ کرنے کے حوالے سے پیش آنے والے چیلنجز کو نظرانداز نہیں کیا جاسکتا۔

ہماری ٹیم کا مشورہ یہ ہے کہ آپ کے بارے میں یہ سوچنے میں مدد کریں کہ آپ کے لیے دور دراز کے تدریسی طریقہ کو کس طرح آسان اور قابلِ انتظام بنایا جائے۔

پلیٹ فارم سے زیادہ اسباق پر فوکس کریں:

کلاس روم میں اس کے جسمانی جزو اور اوصاف کے ساتھ لیکچر دینا اس بات کی ضمانت نہیں دیتا کہ آپ جو اسباق پڑھا رہے ہیں وہ طلباء کو سمجھ آتے ہیں اور وہ انہیں سیکھنے اور سمجھنے میں اسی طرح موثر یا مشغول ہیں۔

یہ وقت نہیں ہے کہ آپ اس بارے میں سوچیں کہ آپ کس طرح انتظام کریں گے بلکہ اس کے بارے میں یہ سوچیں گے کہ اگر دور دراز کی ترتیب میں ترجمہ کیا جائے اور ٹیکنالوجی کے استعمال سے ترجمہ کیا جائے تو کون سا طریقہ یا کلاس روم کی حکمت عملی سب سے زیادہ موثر ثابت ہوسکتی ہے۔ اس لیے ہمارا مشورہ یہ ہے کہ اس وقت کو اپنے تدریسی اسلوب میں نئے آئیڈیاز کو شامل کرنے کے مواقع کے طور پر استعمال کریں۔

کس طرح آپ کورونا وائرس کے دوران گھر پر بیٹھ کے تعلیم حاصل کرسکتے ہیں

اسے انٹرایکٹِو بنائیں:

محققین کا کہنا ہے کہ روایتی کلاس روم کی ترتیب کے مقابلے میں ٹیکنالوجی سے چلنے والے کام اور مطالعات زیادہ اچھے سے سیکھنے کے انداز اور طرز عمل کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں۔

مزید یہ کہ، بیشتر طلباء ان دنوں ٹیکنالوجی سے آگاہ ہیں اور اپنے سماجی میل جول اور کام کے لیے ریموٹ ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہیں۔

ہم اساتذہ کرام کو مشورہ دیتے ہیں کہ وہ اس امکان سے زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھائیں۔

یہاں کچھ آئیڈیاز ہیں جن پر آن لائن لیکچرز کے حوالے سے حکمت عملی تیار کرتے وقت آپ غور کرتے ہیں۔ یہ آئیڈیاز آپ کے لیے خاصے مفید ثابت ہوسکتے ہیں۔

 

  • اسباق اور پڑھنے کے مواد کے بارے میں ایک سوال پوسٹ کریں اور تحریری شکل میں آراء اور جوابات حاصل کریں۔
  • آپ جو نکات شیئر کر رہے ہیں اس پر اختلاف رائے یا سمجھوتہ کو سمجھنے کے لیے پولز کا استعمال۔
  • طلبہ کے لیے کسی بھی موضوع پر بات چیت کرنے کے لیے "بز گروپ" قائم کرنا۔
  •  

کہتے ہیں ہر چیز کے اچھے اور برے دو پہلو ہوتے ہیں۔ آج کے اس اہم وقت میں جب عالمی وبا کے باعث بہت سی چیزیں تبدیل ہورہی ہیں آن لائن سیٹنگ نے اگرچہ بہت سارے مواقع کے لیے دروازے بند کردیئے ہیں جو ایک استاد روایتی ماحول میں پڑھاتے ہوئے حاصل کرسکتے ہیں ، تاہم اس نے اساتذہ کے لیے اس وقت کو زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھانے کے لیے پڑھانے کے انداز میں جدت طرازی اور نئے طریقہ کار کو شامل کرنے کی بہت سی نئی راہیں بھی کھول دی ہیں۔

ان طریقوں پر عمل کرنے کے لیے یہ اچھا وقت ہے تاکہ آپ ان کو اپنے روایتی کلاس روم میں شامل کرسکیں جب ایک بار یہ گرد بیٹھ جائے اور طلباء اسکول واپس آجائیں تو یہ طریقے اُس وقت آپ کے اور اسٹوڈنٹس کے بہت کام آئیں گے۔

کلاس سے پہلے ہدایات:

اگر آپ زوم پر اپنا کورس طلب کررہے ہیں تو، اس سے بہتر ہے کہ لیکچرز سے پہلے قواعد طے کرلیں۔ کچھ طلبا نئے پلیٹ فارم کے ساتھ ہم آہنگ ہونے میں ابھی آرام دہ محسوس نہیں کر رہے، آن لائن کلاس کے دوران پلیٹ فارم کو کس طرح استعمال کرنا ہے ، پوچھ گچھ کے قواعد، آن لائن کلاس کے دوران کچھ مخصوص رویوں کو برقرار رکھنے کے بارے میں ہدایات، ہیڈ فون کا استعمال وغیرہ آپ کی زندگی آسان بنا دے گا۔

مثال کے طور پر:

ہماری کلاس زوم آن لائن کانفرنس سسٹم کے ذریعے پوری ہوگی، ہم وہی اصول اور قواعد اپنائیں گے جن پر جسمانی کلاس روم میں عمل کرتے آئے ہیں، جیسے نوٹس لینا، سوالات پوچھ کر اور جوابات دے کر کلاس روم کے معمولات میں حصہ لینا۔ کلاس روم کے لیے تیار لباس پہننا وغیرہ۔

سب کے فائدے کے لیے، کسی پرسکون جگہ پر کورس میں شامل ہوں۔ اپنی ویڈیو آن کریں۔ اپنے مائیکروفون کو بند کردیں جب تک کہ آپ بات نہیں کررہے۔ کلاس میں حصہ لینے کیلئے براؤزر ٹیبز کی ضرورت نہیں ہے اس لیے انہیں بند رکھیں۔

سیکھنے کی یہ صورت ہم سب کے لیے کسی نہ کسی حد تک نئی ہوگی، اور کامیابی کا انحصار اسی عزم پر ہوگا جو ہم سب جسمانی کلاس روم میں اپنے ساتھ لاتے ہیں۔

 

ہارورڈ اسکول،ٹیچ ریموٹلی۔

کس طرح آپ کورونا وائرس کے دوران گھر پر بیٹھ کے تعلیم حاصل کرسکتے ہیں

اپنی ترجیحات کا تعین کریں:

اگرچہ یہ واضح نہیں ہے کہ یہ گرد کب بیٹھے گی، لیکن آپ کو ترجیحات کا تعین کرتے وقت زیادہ حقیقت پسندانہ ہونے کی ضرورت ہے۔

زیادہ اہم کیا ہے اور کیا شیڈول کیا جاچکا ہے یا بعد میں شیڈول کیا جاسکتا ہے۔

اور یہ بھی کہ طالب علم کی اپنے اس پڑھنے کے نئے طریقہ کار کو سمجھنے کی صلاحیت کو بھی ذہن میں رکھیں۔ کچھ لوگ اس کے ساتھ معمول کے مطابق آرام دہ نہیں ہوسکتے ہیں تو ایسے میں کیا آپ ان کے لئے پلان B رکھتے ہیں؟

آپ ایک دن میں اس پر عبور حاصل نہیں کرسکتے ہیں تو ظاہر ہے کہ آپ کے طلباء کے لیے بھی ایسا کرنا آسان نہیں ہوگا۔

یاد رکھیں کہ آپ یہ پہلی بار کر رہے ہیں لہٰذا اپنے آپ سے اور اپنے طلباء سے بہت زیادہ توقع نہ کریں۔ لیکن ایک بار جب آپ اسے سیکھ لیں گے تو آپ کے طلبہ آپ سے بھی زیادہ تیز رفتار سیکھیں گے۔

جب کسی چیز کا منصوبہ بناتے ہیں تو اپنے طلباء کو بورڈ پر رکھیں اور ان کے آئیڈیاز طلب کریں۔

اگر آپ ٹیکنالوجی کو اچھے سے سمجھ نہیں پا رہے تو اپنے طلبا سے اس بارے میں پوچھنے میں کوئی مضائقہ نہیں۔

کلاس کے رضاکاروں سے پوچھنا بھی ایک اچھا آئیڈیا ہے اور یہ آپ کے لیے چیزوں کو آسان بنا دے گا۔

تمام مواد کے جملہ حقوق محفوظ ہیں ©️ 2021 کیمپس گرو

کیا آپ کے ذہن میں کوئی سوال ہے
ڈسکس کریں

× کلک کریں