دماغی نشوونما کے لیے بہترین عمر کیا ہے؟

دماغی نشوونما کے لیے بہترین عمر کیا ہے؟

دماغی نشوونما کے لیے بہترین عمر کیا ہے؟

دنیائے سائنس کے مشہور ترین نام البرٹ آئن اسٹائن جب ایک چھوٹے سے بچے تھے تو کون جانتا تھا کہ آج جس بچے کی زبان صاف نہیں ہے اور جسے بولنے میں دشواری ہوتی ہے اور اسی وجہ سے اس کے والدین پریشان رہتے ہیں، یہ بچہ بڑا ہو کر سائنس کے میدان میں اتنا بڑا حصہ ڈالے گا۔

یہاں ہم میں سے کوئی بھی یہ پوچھ سکتا ہے کہ ایک بچہ جو اپنے بچپن میں بنیادی تعلیم کی صلاحیتوں کو سیکھنے کے ساتھ آگے بڑھنے کی جدوجہد کر رہا تھا وہ آئن اسٹائن کیسے بن سکتا ہے؟

تاہم تاریخ اس سوال کا جواب دیتی ہے کہ آئن اسٹائن کے گرد پھیلے ہوئے مسائل اور الجھنوں سے اس نے کیسے چھٹکارہ حاصل کیا اور کیسے وہ دنیائے سائنس کا ایک جینئس بن کر سامنے آیا۔

اپنے بچپن میں جب آئن اسٹائن بیمار پڑتا تھا اور اس بیماری کے عالم میں سارا دن بستر پر پڑا رہتا تھا ایسے میں ایک دن ان کے والد نے انہیں ایک کمپاس دیا جس نے ان کے لیے ایک جادوئی ڈیوائس کا کام کیا اور سائنس کے میدان میں اس کے اندر تجسس کو جنم دیا۔

ان کے والد کے اس تحفے کے بعد ان کی والدہ جو کہ ایک پرجوش میوزیشن تھیں انہوں نے انہیں پانچ سال کی عمر میں ایک وائیلن دے دیا۔

یہ دو چیزیں جن کے بارے میں ماہرین تعلیم کہتے ہیں کہ اس نے آئن اسٹائن کے لیے سائنس کے شعبے میں دلچسپی پیدا کرنے میں مدد کی اور صحیح عمر اور وقت پر اپنے دماغ کی منفرد طریقوں سے نشوونما کرنے میں بھی مدد کی۔

ماہرین نفسیات کا کہنا ہے کہ بچوں کے دماغ میں نشوونما کرنے کی صلاحیت بتدریج ہوتی ہے یعنی بچوں کی ذہنی نشوونما درجہ بدرجہ بڑھتی ہے۔ جسے نازک مراحل کہتے ہیں۔ بچوں میں دماغی نشونما کا پہلا مرحلہ 2 سال کی عمر میں ہوتا ہے جبکہ دوسرا مرحلہ جوانی کے دوران ہوتا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ ابتدائی عمر میں بچے کے دماغ کے خلیوں کے درمیان رابطوں یا دماغی اشاروں کی تعداد دوگنی ہوجاتی ہے۔

ماہرین اطفال کا کہنا ہے کہ دو سے سات سال تک کی عمر کے بچے مختلف طریقوں سے تعلیم حاصل کرتے ہیں اور یہ طریقے ان کے دماغ کی نشوونما پر بہت زیادہ اثر ڈالتے ہیں۔ بچوں کے دماغ کی نشوونما کے لیے پہلا اہم مرحلہ 2 سال کی عمر سے شروع ہوتا ہے اور 7 سال کی عمر میں اختتام پذیر ہوتا ہے۔ اس دوران آپ اپنے بچے کے ذہنی رجحانات کو مدِ نظر رکھتے ہوئے اس کے لیے کسی بھی شعبے کا انتخاب کرسکتے ہیں تاکہ اسی شعبے میں بچہ دل لگائے اور بڑا ہو کر اس میں کسی اہمامور کو سرانجام دے۔ یہ عرصہ بچوں کے لیے تعلیم کی بنیاد قائم کرنے کا ایک اہم موقع فراہم کرتا ہے۔ ماہرین نفسیات تجویز کرتے ہیں کہ اس نازک دور کے اثر کو زیادہ سے زیادہ حد تک بڑھانے میں مدد کے لیے سب سے اچھے تین طریقے ہیں جو سیکھنے کی محبت کو بڑھا رہے ہیں، گہرائی میں سیکھنے کے بجائے توسیعی انداز میں سیکھنے پر توجہ مرکوز کررہے ہیں اور جذباتی ذہانت پر دھیان دے رہے ہیں۔ 

سیکھنے کے عمل سے محبت کی حوصلہ افزائی کریں:

ماہرین کا کہنا ہے کہ چھوٹے بچوں پر گریڈز اور ہر حال میں کامیابی کا بوجھ مت ڈالیں، انہیں گریڈز اور کارکردگی پر توجہ دینے کے بجائے سیکھنے کے عمل سے لطف اندوز ہونا چاہیے۔

اس مرحلے پر والدین اور اساتذہ کو بچے کی نئی سرگرمیوں کی کوشش کرنے اور کچھ انوکھا سیکھنے کی خوشیوں پر زور دینا چاہیے۔ سب سے اہم بات یہ ہے کہ اساتذہ کو کبھی بھی چھوٹے بچوں پر لیبل لگانے یا ان کی اہلیت کے بارے میں بیانات نہیں دینا چاہیے۔ اگر بچے اپنے والدین یا اساتذہ کو ان کے من پسند نتائج دینے کے بجائے سیکھنے کے عمل میں جوش و جذبے کا مظاہرہ کریں اور فیصلہ کن نتائج اخذ کریں تو یقیناً بچے سیکھنے کے عمل سے لطف اندوز ہوں گے۔

گہرائی نہیں بلکہ وسعت پر توجہ دیں:

ترقی کے اس مرحلے کے دوران نتائج کو تبدیل کرنے سے بچنے کا ایک طریقہ یہ ہے کہ کشش ثقل سے زیادہ مہارت کی وسعت پر زور دیا جائے یعنی بچوں کو گہری گہری باتیں سکھانے کے بجائے ان کے دماغ کو کھُلنے دیں تاکہ وہ ذہنی طور پر وسعت اختیار کریں۔ بچوں کو وسیع پیمانے پر مختلف سرگرمیوں کے سامنے بے نقاب کرنا مختلف شعبوں میں مہارت کو تیار کرنے کی بنیاد قائم کرتا ہے۔ اس مرحلے پر اساتذہ کو چاہیے کہ بچوں کو موسیقی، پڑھنے، کھیل کود، ریاضی، آرٹ، سائنس اور لسانیات کے شعبوں میں مشغول کریں۔

جذباتی ذہانت کو نظر انداز نہ کریں:

بچوں کو ریاضی کے بنیادی اصول سکھانا اگرچہ ایک اچھا عمل ہے لیکن اساتذہ کو ان کی جذباتی ذہانت کو بھی نظرانداز نہیں کرنا چاہیے۔

طلباٗ دماغ کی نشوونما کے پہلے نازک دور میں اپنی منطقی اور ریاضیاتی مہارتوں کی نشوونما کرتے ہیں لیکن اگر اساتذہ اور والدین بھی ان کی باہمی مہارت کو بڑھانے اور نکھارنے میں ان کی مدد کرنا چاہیں تو ہمدردی، احسان اور ٹیم ورک کو فروغ دیں۔

تمام مواد کے جملہ حقوق محفوظ ہیں ©️ 2021 کیمپس گرو

کیا آپ کے ذہن میں کوئی سوال ہے
ڈسکس کریں

× کلک کریں